Sunday, November 20, 2016

Ye Hawa kuch yun ajj keh rahi thi mujh se...


Ye Hawa kuch yun ajj keh rahi thi mujh se...
Ye Hawa kuch yun ajj keh rahi thi mujh se......

Ghutan hoti hain mujhe won logon ke seena main...
 ..
...

Kisi ka agar kuch, Jo bhala kar nahi karte....
Kisi ka agar kuch. Jo bhala kar nahi karte....
.
.
.
Kyun Surakh banate rehte hain, Garibon ke Safino main

--

Adna Kushish

Shahid Shah 



Kuch Yun Hai Zindagi......

Sawaal Zehar ka nahi tha, main tu pee gaya.....
Sawaal Zehar ka nahi tha.....main tu pee gaya.........................
...
....
.
.
.
Takleef logo ko tab hui......... jab main jee gaya.

Tuesday, April 19, 2016

Munawwar Rana Maa Poem In Urdu

میں نے روتے ہوئے پوںچھی تھے کسی دن آنسو
مدتوں ماں نے نہیں دھویا سکارف اپنا

لبوں پہ اس کے کبھی بددا نہیں ہوتی
بس ایک ماں ہے جو مجھ سے خفا نہیں ہوتی

اب بھی چلتی ہے جب آندھی کبھی غم کی 'رانا'
ماں کی ممتا مجھے باہوں میں چھپا لیتی ہے

مصیبت کے دنوں میں ہمیشہ ساتھ رہتی ہے
پيمبر کیا پریشانی میں امت چھوڑ سکتا ہے

جب تک رہا ہوں دھوپ میں شیٹ بنا رہا
میں نے اپنی ماں کا آخری زیور بنا رہا

کسی کو گھر ملا حصے میں یا کوئی دكا آئی
میں گھر میں سب سے چھوٹا تھا میرے حصے میں ماں آئی

اے اندھیرے! دیکھ لے منہ تیرا سیاہ ہو گیا
ماں نے آنکھیں کھول دیں گھر میں اجالا ہو گیا

اس طرح میرے گناہوں کو وہ دھو دیتی ہے
ماں بہت غصے میں ہوتی ہے تو رو دیتی ہے

میری خواہش ہے کہ میں پھر سے فرشتہ ہو جاؤں
ماں سے اس طرح لپٹ جاؤں کہ بچہ ہو جاؤں

حادثوں کی گرد سے خود کو بچانے کے لئے
ماں! ہم اپنے ساتھ صرف تیری دعا لے جائیں گے

خود کو اس بھیڑ میں تنہا نہیں ہونے دیں گے
میں نے روتے ہوئے مسح تھے کسی دن آنسو

Maujoda Passmanzar Main Kuch Ashar

खुद ही खुदी को काट कर खुद खुशी कर ली
ज़रा सी ठोकर क्या लगी ये दिल लगी कर ली

मैं ये समझता था बड़े अकल्मन्द हैं ये लोग,
दुश्मन को जीता कर खुद से दुश्मनी कर ली.

--

خود ہی کھدی کو کاٹ کر خود خوشی کر لی
ذرا سی ٹھوکر کیا لگی یہ دل لگی کر لی

میں یہ سمجھتا تھا بڑے اكلمند ہیں یہ لوگ،
دشمن کو جیتا کر خود سے دشمنی کر لی.


--
شاهيد شاہ

Tuesday, February 16, 2016

Rahat Indori Shayari Collection

راحت اندوري، اردو زبان کے مشہور شاعرہیں. ہندی فلموں کے جانے مانے گیتکار ہیں. ان شاعری میں بہت ہی سادہ اردو کا استعمال کیا گیا ہے جو کی ہندی زبان بولنے والوں کے بھی آسانی سے سمجھ میں آ جاتی ہیں. یہاں پر ہم نے ان مشہور شايريو کا ایک ہی جگہ مرتب کرنے کی کوشش کی ہیں.


اب ہم مکان میں تالا لگانے والے ہیں
پتہ چلا ہیں کی مہمان آنے والے ہیں


--


آنکھوں میں پانی رکھوں، ہوںٹھو پہ چنگاری رکھو
زندہ رہنا ہے تو تركيبے بہت ساری رکھو
راہ کے پتھر سے بڑھ کے، کچھ نہیں ہیں
منزلیںراستے آواز دیتے ہیں، سفر جاری رکھو


--


جاگ کی بھی، جگانے کی بھی، عادت ہو جائے
کاش تجھ کسی شاعر سے محبت ہو جائے
دور ہم کتنے دن سے ہیں، یہ کبھی غور کی
اپھر نہ کہنا جو امانت میں خیانت ہو جائے


--


سورج، ستارے، چاند میرے ساتھ میں رہیں
جب تک تمہارے ہاتھ میرے ہاتھ میں رہیں
شاخوں سے ٹوٹ جائے وہ پتے نہیں ہیں ہم
آندھی سے کوئی کہہ دے کی اوقات میں رہیں

--


گلاب، خواب، دوا، زہر، جام کیا کیا ہیں
میں آ گیا ہ بتا انتظام کیا کیا ہیں

فقیر، شاہ، قلندر، امام کیا کیا ہیں
تجھے پتہ نہیں تیرا غلام کیا کیا ہیں

  --




کبھی مہک کی طرح ہم گلو سے اڑتے ہیں
کبھی دھوئیں کی طرح پہاڑوں سے اڑتے ہیں

یہ كےچيا ہمیں اڑنے سے خاک روكےگي
کی ہم پروں سے نہیں حوصلوں سے اڑتے ہیں

 
There was an error in this gadget